Posted by: Administrator | 21 August, 2010

911 – Could we have decided upon some other decision? Pervez Musharraf

 Pervez Musharraf

Pakistan’s decision to join the US and the Coalition in Afghanistan in their attack on the Taliban remains a subject of intense debate. This is the decision we took after a thorough, deliberate and realistic appraisal of the obtaining geo-strategic realities, but it has drawn criticism and praise alike. With the latest upsurge in terrorist activity in Pakistan, the debate on the post-9/11 response of Pakistan has intensified. I, therefore, thought it my duty to lay bare facts in front of the people of Pakistan, so that with all the necessary information they could judge the situation more accurately. The decision of my government was indeed based on, and in conformity with, my slogan of ‘Pakistan First’.

 Some people suggested that we should oppose the United States and favour the Taliban. Was this, in any way, beneficial for Pakistan? Certainly not! Even if the Taliban and Al-Qaeda emerged victorious, it would not be in Pakistan’s interest to embrace obscurantist Talibanisation. That would have meant a society where women had no rights, minorities lived in fear and semi-literate clerics set themselves up as custodians of justice. I could have never accepted this kind of society for Pakistan. In any case, judging by military realities one was sure that the Taliban would be defeated. It would have been even more detrimental for Pakistan to be standing on the defeated side.

The United States, the sole superpower, was wounded and humiliated by the 9/11 Al-Qaeda terrorist attack. A strong retaliatory response against Al-Qaeda and the Taliban in Afghanistan was imminent.

I was angrily told, by the US, that Pakistan had to be ‘either with us or against us’. The message was also conveyed to me that ‘if Pakistan was against the United States then it should be prepared to be bombed back to the Stone Age.’

This was the environment within which we had to take a critical decision for Pakistan. My sole focus was to make a decision that would benefit Pakistan in the long run, and also guard it against negative effects.

What options did the US have to attack Afghanistan? Not possible from the north, through Russia and the Central Asian Republics. Not from the west, through Iran. The only viable direction was from the east, through Pakistan. If we did not agree, India was ever ready to afford all support. A US-India collusion would obviously have to trample Pakistan to reach Afghanistan. Our airspace and land would have been violated. Should we then have pitched our forces, especially Pakistan Air Force, against the combined might of the US and Indian forces? India would have been delighted with such a response from us. This would surely have been a foolhardy, rash and most unwise decision. Our strategic interests – our nuclear capability and the Kashmir cause – would both have been irreparably compromised. We might even have put our very territorial integrity at stake.

The economic dimension of confronting the United States and the West also needed serious analysis. Pakistan’s major export and investment is to and from the United States and the European Union. Our textiles, which form 60 percent of our export and earnings, go to the West. Any sanctions on these would have crippled our industry and choked our economy. Workers would lose their jobs. The poor masses of Pakistan would have been the greatest sufferers.

China, our great friend, also has serious apprehensions about Al-Qaeda and the Taliban. The upsurge of religious extremism emboldening the East Turkistan Islamic Movement in China is due to events in Afghanistan and the tribal agencies of Pakistan. China would certainly not be too happy with Pakistan on the side of Al-Qaeda and the Taliban. Even the Islamic Ummah had no sympathy for the Taliban regime; countries like Turkey and Iran were certainly against the Taliban. The UAE and Saudi Arabia – the only two countries other than Pakistan that had recognised the Taliban regime – had become so disenchanted with the Taliban that they had closed their missions in Kabul.

Here, I would also like to clear the notion that we accepted all the demands put forward by USA.

On September 13th 2001, the US Ambassador to Pakistan, Wendy Chamberlain, brought me a set of seven demands. These demands had also been communicated to our Foreign Office by the US State Department.

1. Stop Al-Qaeda operatives at your borders, intercept arms shipments through Pakistan, and end all logistical support for bin Laden

2. Provide the United States with blanket overflight and landing rights to conduct all necessary military and intelligence operations.

 

3. Provide territorial access to the United States and allied military intelligence as needed, and other personnel to conduct all necessary operations against the perpetrators of terrorism and those that harbour them, including the use of Pakistan’s naval ports, air bases, and strategic locations on borders.

 

4. Provide the United States immediately with intelligence, immigration information and databases, and internal security information, to help prevent and respond to terrorist acts perpetrated against the United States, its friends, or its allies.

 

5. Continue to publicly condemn the terrorist acts of September 11 and any other terrorist acts against the United States or its friends and allies, and curb all domestic expressions of support [for terrorism] against the United States, its friends, or its allies.

 

6. Cut off all shipments of fuel to the Taliban and any other items and recruits, including volunteers, en route to Afghanistan, who can be used in a military offensive capacity or to abet a terrorist threat.

 

7. Should the evidence strongly implicate Osama bin Laden and the Al-Qaeda network in Afghanistan and should Afghanistan and the Taliban continue to harbour him and his network, Pakistan will break diplomatic relations with the Taliban government, end support for the Taliban, and assist the United States in the afore-mentioned ways to destroy Osama bin Laden and his Al Qaeda network.

 

Some of these demands were ludicrous, such as “curb all domestic expressions of support [for terrorism] against the United States, its friends, and its allies.” How could my government suppress public debate, when I had been trying to encourage freedom of expression?

 

I also thought that asking us to break off diplomatic relations with Afghanistan if it continued to harbour Osama bin Laden and Al-Qaeda was not realistic, because not only would the United States need us to have access to Afghanistan, at least until the Taliban fell, but such decisions are the internal affair of a country and cannot be dictated by anyone. But we had no problem with curbing terrorism in all its forms and manifestations. We had been itching to do so before the United States became its victim.

 

We just could not accept demands two and three. How could we allow the United States “blanket overflight and landing rights” without jeopardising our strategic assets? I offered only a narrow flight corridor that was far from any sensitive areas. Neither could we give the United States “use of Pakistan’s naval ports, air bases, and strategic locations on borders.” We refused to give any naval ports or fighter aircraft bases. We allowed the United States only two bases – Shamsi in Balochistan and Jacobabad in Sindh – and only for logistics and aircraft recovery. No attack could be launched from there. We gave no “blanket permission” for anything.

 

The rest of the demands we could live with. I am happy that the US government accepted our counterproposal without any fuss. I am shocked at the aspersion being cast on me: that I readily accepted all preconditions of the United States during the telephone call from Colin Powell. He did not give any conditions to me. These were brought by the US ambassador on the third day.

 

Having made my decision, I took it to the Cabinet. Then I began meeting with a cross section of society. Between September 18 and October 3, I met with intellectuals, top editors, leading columnists, academics, tribal chiefs, students, and the leaders of labour unions. On October 18, I also met a delegation from China and discussed the decision with them. Then I went to army garrisons all over the country and talked to the soldiers. I thus developed a broad consensus on my decision.

 

This was an analysis of all the losses/harms we would have suffered. if we had taken an anti-US stand. At the same time, I obviously analysed the socio-economic and military gains that would accrue from an alliance with the West. I have laid down the rationale for my decision in all its details. Even with hindsight, now, I do not repent it. It was correct in the larger interest of Pakistan. I am confident that the majority of Pakistanis agree with it.

 

 The writer is a former President of Pakistan and Founding President of the All Pakistan Muslim League.

 

نائن الیون۔ کیا ہم کوئی دوسرا فیصلہ کرسکتے تھے؟ ـ

Nawai-Waqt 

5 جون ، 2011

جنرل(ر) پرویز مشرف پاکستان کا امریکہ اور اسکے اتحادیوں کا افغانستان میں طالبان کیخلاف حملے میں ساتھ دینا ایک بحث طلب معاملہ ہے۔یہ فیصلہ ہم نے جیو سٹرٹیجک حقائق کومکمل طورپر مدنظر رکھتے ہوئے کیا لیکن اس فیصلے پر تعریف اور تنقید دونوں کی جارہی ہیں۔ پاکستان میں دہشت گردی کے حالیہ واقعات کے بعد پاکستان کا نائن الیون کے حملوں کے بعد کا ردعمل زیادہ اہمیت اختیار کرگیا ہے۔اس لئے میں اپنا فرض سمجھتا ہوں کہ پاکستانی عوام کو تمام ضروری معلومات سے آگاہ کروں تاکہ وہ صورتحال کا بہتر طورپر ادراک کرسکیں۔ میری حکومت کا امریکہ کا ساتھ دینے کا فیصلہ درحقیقت میرے ماٹو ”سب سے پہلے پاکستان“ پر مبنی تھا۔

 کچھ لوگوں نے مشورہ دیا کہ ہمیں امریکہ کی مخالفت کرتے ہوئے طالبان کاساتھ دیناچاہئے کیا یہ کسی بھی طرح پاکستان کے حق میں تھا؟ یقینی طورپر نہیں۔ اگر القاعدہ اور طالبان کو اس جنگ میں فتح ہوبھی جاتی تو بھی یہ پاکستان کے مفاد میں نہیں تھا کہ وہ طالبانائزیشن کو اختیارکرتا۔ طالبانائزیشن اختیار کرنے کا مطلب ہوتا کہ ہم ایک ایسے معاشرے میں رہ رہے ہیں جہاں خواتین کو کوئی حقوق حاصل نہیں، ا قلیتیں خوف کی حالت میں رہیں نیم پڑھے لکھے عالم انصاف کے رکھوالے بن جائیں ۔ میں اس قسم کی صورتحال کو پاکستان کیلئے کبھی بھی پسند نہ کرتا۔ فوجی نقطہ نظر سے یہ با ت واضح تھی کہ طالبان کو اس جنگ میں یقینی طورپر شکست ہوناہے اور پاکستان کیلئے یہ بہت نقصان دہ ہوتا کہ وہ ایک شکست خوردہ فریق کا ساتھ دیتا۔دنیا کی تنہا عالمی طاقت امریکہ نائن الیون کے حملے کے بعد زخمی اور شرمندہ ہوچکا تھا۔ افغانستان میں القاعدہ اور طالبان کیخلاف شدید ردعمل ناگزیر ہوچکا تھا۔ مجھے امریکہ کی طرف سے سخت لہجے میں پیغام دیا گیا کہ پاکستان کو یا تو ہمارا ساتھ دینا پڑے گا یا ہماری مخالفت کرنا پڑے گی۔ مجھے یہ پیغام بھی دیا گیا کہ اگر پاکستان نے امریکہ کی مخالفت کی تو اسے بمباری کے ذریعے پتھر کے دور میں پہنچا دیا جائے گا۔ یہ وہ صورتحال تھی جس میں ہمیں پاکستان کے حوالے سے انتہائی اہم فیصلہ کرنا تھا۔میری پوری توجہ اس بات پر مرکوز تھی کہ ایک ایسا فیصلہ کیاجائے جس سے پاکستان کو طویل المدتی فائدہ ہو اور وہ ہر قسم کے منفی اثرات سے بچارہے۔ امریکہ کے پاس افغانستان پر حملہ کرنے کیلئے کیا آپشن تھے؟ وہ شمال کی طرف سے ایسا نہیں کرسکتا تھا کیونکہ وہاں روس اور وسطی ایشیا کی ریاستیں موجود تھیں۔ وہ مغرب کی طرف سے ایران کے راستے سے بھی ایسا نہیں کرسکتا تھا۔ وہ صرف پاکستان کے ذریعے افغانستان پر حملہ کر سکتا تھا۔ اگر ہم راضی نہ ہوتے تو بھارت ایسا کرنے کیلئے تیار تھا۔ امریکہ اور بھارت کا اتحاد پاکستان کو روند کر افغانستان تک پہنچتا۔ ہماری فضائی اور زمینی حدود کی خلاف ورزی کی جاتی۔ کیاہم اپنی فوج کے ذریعے امریکہ اور بھارت کی مشترکہ قوت کا مقابلہ کرتے؟ بھارت ہماری طرف سے ایسے ردعمل پر بہت خوش ہوتا۔ یہ ایک مکمل طورپر بے وقوفانہ اور غیر عقلمندانہ ردعمل ہوتا۔ ہمیں اپنے سٹرٹیجک مفادات…. اپنی ایٹمی قوت اور کشمیر کے حوالے سے نقصان اٹھانا پڑتا۔ ہماری علاقائی خود مختاری بھی داﺅ پر لگ سکتی تھی۔ امریکہ اور مغرب سے ٹکراﺅ کے نتیجے میں اقتصادی صورتحال پر بھی سنجیدگی سے غور کرنے کی ضرورت ہے۔ پاکستان کی اہم برآمدات کا ذریعہ امریکہ اور یورپی یونین ہیں اور ہمارے ملک میں زیادہ سرمایہ کاری بھی وہیں سے ہوتی ہے۔ ہماری ٹیکسٹائل جو کہ ہماری برآمدات کا 60فیصد ہے وہ بھی یورپ کو برآمد کی جاتی ہیں۔ اس پرکسی بھی قسم کی پابندی سے ہماری صنعت کا گلا گھونٹا جاسکتا تھا۔ مزدوروں کی ملازمتیں کھو جاتیں۔ پاکستان کے غریب عوام کو اسی کا سب سے زیادہ نقصان ہوتا۔ ہمارے اہم ترین دوست چین کو بھی القاعدہ اور طالبان کیخلاف شدید تحفظات ہیں۔ چین میں مشرقی ترکستان اسلامک موومنٹ کی وجہ بھی افغانستان اور ہمارے قبائلی علاقوں کے واقعات ہیں۔ اگر ہم القاعدہ اور طالبان کا ساتھ دیتے تو چین بھی ہم سے خوش نہ ہوتا۔مسلم اُمہ بھی طالبان حکومت سے کوئی ہمدردی نہیں رکھتی تھی ترکی اور ایران طالبان کے سخت خلاف تھے۔ پاکستان کے علاوہ صرف متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب نے طالبان حکومت کو تسلیم کیا تھا۔ لیکن وہ بھی طالبان سے اس قدر مایوس ہوئے تھے کہ انہوں نے کابل میں اپنے سفارتی مشن بند کردئیے تھے۔ یہاں میں یہ بات بھی واضح کرناچاہوں گا کہ ہم نے امریکہ کی جانب سے پیش کردہ تمام مطالبات تسلیم کرلئے

تھے۔ 13ستمبر2001 کو پاکستان میں امریکی سفیر وینڈی چیمبر لین میرے پاس سات مطالبات لیکر آئیں یہ مطالبات امریکی وزارت خارجہ کی جانب سے ہمارے فارن آفس کو بھی بھجوائے گئے تھے۔ جو مندرجہ ذیل تھے

۔ 1۔ اپنی سرحدوں پر القاعدہ کے کارکنوں کی سرگرمیاں روکی جائیں پاکستان کے راستے ہتھیاروںکی سپلائی کو روکاجائے اور بن لادن کیلئے ہرقسم کی لاجسٹک سپورٹ کا خاتمہ کیاجائے

۔ 2۔ امریکہ کو تمام ضروری فوجی اور انٹیلی جنس آپریشنز کیلئے پروازوں اور لینڈنگ کے حقوق فراہم کئے جائیں

۔ 3۔ امریکہ اور اتحادی فوجی انٹیلی جنس کو ضرورت کے مطابق اور دیگر فوجیوں کو دہشت گردوں اور ان کے سرپرستوں کیخلاف تمام ضروری آپریشنز کرنے کیلئے زمینی رسائی فراہم کی جائے جس میں پاکستان کی نیول پورٹس، ائیر بیسز اور سرحدوں پر سٹرٹیجک لوکیشنز بھی شامل ہوں

۔ 4۔ امریکہ کو فوری طورپر ایسی تمام انٹیلی جنس امیگریشن انفارمیشن اور ڈیٹا بیسز اور داخلی سلامتی کے بارے میں اطلاعات فراہم کی جائیں جن سے امریکہ اس کے دوستوں اور اتحادیوں کیخلاف دہشت گردانہ سرگرمیوں کو روکنے اور ان کا جواب دینے میں مدد مل سکے

۔ 5۔11ستمبر کے دہشت گرد اقدامات اور امریکہ ،اسکے دوستوں اور اتحادیوں کیخلاف کسی بھی قسم کی دہشت گردی کی کھلے طور پر مذمت کا سلسلہ جاری رکھا جائے اور امریکہ ،اس کے دوستوں یا اسکے اتحادیوں کیخلاف دہشت گردی کی حمائت میں ہر قسم کے اظہار رائے کو روکاجائے

۔ 6۔ طالبان کو ایندھن اور دیگر اشیاءو ریکروٹس بشمول براستہ افغانستان ایسے رضا کاروں کی ترسیل کا سلسلہ منقطع کیاجائے جو فوجی حملے یا دہشت گردی میں مددگار کے طورپر استعمال کئے جاسکتے ہوں

۔ 7۔ اگر افغانستان میں اسامہ بن لادن اور القاعدہ نیٹ ورک کے سرگرم ہونے اور افغانستان کے طالبان کی جانب سے ان کی مدد کرنے کی ٹھوس شہادت ملے تو پاکستان طالبان حکومت سے سفارتی تعلقات توڑے گا اور طالبان کی حمائت ختم کردے گا اور اسامہ بن لادن اور القاعدہ نیٹ ورک کو بیان کردہ طریقوں کے مطابق تباہ کرنے میں امریکہ کی مدد کرے گا۔ ان میں بعض مطالبات مضحکہ خیز تھے جیسا کہ ایسے تمام داخلی اظہار رائے کا سدباب کیاجائے جس سے امریکہ اسکے دوستوں اور اتحادیوں کیخلاف دہشت گردی کی حمائت کا تاثر ملتا ہو بھلا میری حکومت عوامی اظہار رائے کو کیسے دبا سکتی تھی جبکہ میں اظہار رائے کی حوصلہ افزائی کیلئے کوشش کررہا تھا؟

 میں نے یہ بھی سوچا کہ ہم سے یہ کہنا کہ افغانستان سے سفارتی تعلقات توڑ دئیے جائیں اگر وہ اسامہ بن لادن اور القاعدہ کی حمائت جاری رکھیں حقیقت پسندانہ نہیں کیونکہ افغانستان تک رسائی کیلئے نہ صرف امریکہ کو ہماری مدد کی ضرورت ہوگی کم سے کم طالبان حکومت کے خاتمہ تک۔ لیکن ایسے فیصلے کسی ملک کا داخلی معاملہ ہے اور کسی کی جانب سے اسے ڈکٹیٹ نہیں کیاجاسکتا تاہم دہشت گردی کو اس کی ہر شکل میں ختم کرنا ہمارے لئے کوئی مسئلہ نہیں تھا ہم امریکہ کے اس کا شکار ہونے سے پہلے ہی ایسا کرنے کی کوشش کررہے تھے۔ ہم دوسرا اور تیسرا مطالبہ تسلیم نہیں کرسکتے تھے ۔ہم امریکہ کو اپنی فضائی حدود میں کھلی پروازوں اور لینڈنگ کے حقوق اپنے سٹرٹیجک اثاثوں کو خطرے میں ڈا ل کر بھلا کیسے دے سکتے تھے؟ میں نے ایک کو ریڈور فراہم کرنے کی پیشکش کی جو ہمارے حساس علاقوں سے خاصے فاصلے پر تھا ہم امریکہ کو اپنی سرحدوں پر نیول پورٹس، ائیر بیسز اور سٹرٹیجک مقامات کے اعتدال کی اجازت بھی نہیں دے سکتے تھے ہم نے نیول پورٹس اور فائٹر طیارو ں کے اڈے دینے سے انکار کردیا ہم نے امریکہ کو بلوچستان میں شمسی اور سندھ میں جیک آباد کے دواڈوں کے صرف لاجسٹکس اور ائیر کرافٹ ریکوری کے استعمال کی اجازت دی ان اڈوں سے کوئی حملہ نہیں کیاجاسکتا تھا ہم نے کسی بھی مقصد کیلئے ” بلینکٹ پرمیشن“ نہیں دی۔ ہم باقی مطالبات پورے کرسکتے تھے اور مجھے خوشی ہے کہ امریکہ نے کسی اعتراض کے بغیر ہماری جوابی تجویز قبول کرلی

۔ میں اپنے اوپر لگائے جانے والے اس الزام پر حیران ہوں کہ میں نے کولن پاول کی ایک فون کال پر امریکہ کی تمام شرائط مان لیں جبکہ انہوں نے مجھے کوئی شرائط پیش ہی نہیں کیں۔ یہ شرائط تیسرے روز امریکی سفیر لائی تھیں۔ میں نے اپنا فیصلہ کرنے کے بعد اسے کابینہ کے سامنے پیش کیا پھر میں نے سوسائٹی کے مختلف طبقوں سے ملاقاتیں شروع کیں18ستمبر اور3 اکتوبر کے درمیان میں نے دانشوروں ، ممتاز ایڈیٹروں ،کالم نگاروں، ماہرین تعلیم، قبائلی سرداروں، طلباءاور لیبر یونین کے رہنماﺅں سے ملاقاتیں کیں

۔18اکتوبر کو میں نے چینی وفد سے بھی ملاقات کی اور فیصلے پر تبادلہ خیال کیا اس کے بعد میں ملک بھر کی فوجی چھاﺅنیوں میں گیا اور فوجیوں سے بات چیت کی اس طرح میں نے اپنے فیصلے پر وسیع اتفاق رائے پیدا کیا۔ یہ ان تمام ممکنہ نقصانات کا تجزیہ تھا جو ہمیں امریکہ کے خلاف فیصلہ کرنے کی صورت میں اٹھانے پڑتے اس طرح میں نے ان سماجی اقتصادی اور فوجی فوائد کا تجزیہ کیا جو مغرب سے اتحادی کے باعث ہمیں حاصل ہوسکتے تھے میں نے دانشمندی پر مبنی اپنے فیصلے کی تمام تفصیلات بیان کردی ہیں اور اب مجھے اپنے اس فیصلے پر کوئی پچھتاوا نہیں ہے پاکستان کے وسیع مفاد میں یہ درست فیصلہ تھا مجھے یقین ہے کہ پاکستانیوں کی اکثریت اس سے اتفاق کرے گی۔

Advertisements

Responses

  1. The decision taken by Gen Musharraf retired was the only choice left for a country like Pakistan. To take on US was not a wise step and he did very well under the circumstances at that time. Majority would say YES he did make a wise move. During his tenure he played a vital role as a leader and minimzed the deaths and attacks on Pakistani soil. Nation salutes him for all the good work he did for Pakistan. Economy and all that but PPP has failed to anything for the nation. They have accumulated funds of the nation and deposited in foreign banks. Treasury is almost empty and thats shame for the leaders. They dont care because they are corrupt.


Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Categories

%d bloggers like this: